بِسمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ وَ الضحَي‏ *** قسم ہے ایک پهر چهڑے دن کی
2 years ago

استخاره کی دعا

 بِسمِ اللهِ الرَّحمنِ الرَحيم

وَ کانَ مِن دُعائِهِ عَلَیهِ السَّلامُ فی الاستِخارَة

(1) اللّهُمّ إِنِيّ أَسْتَخِيرُكَ بِعِلْمِكَ، فَصَلّ عَلَى مُحَمّدٍ وَ آلِهِ، وَ اقْضِ لِي بِالْخِيَرَةِ

(2) وَ أَلْهِمْنَا مَعْرِفَةَ الِاخْتِيَارِ، وَ اجْعَلْ ذَلِكَ ذَرِيعَةً إِلَى الرّضَا بِمَا قَضَيْتَ لَنَا وَ التّسْلِيمِ لِمَا حَكَمْتَ فَأَزِحْ عَنّا رَيْبَ الِارْتِيَابِ، وَ أَيّدْنَإ؛سسّّ بِيَقِينِ الْمُخْلِصِينَ.

(3) وَ لَا تَسُمْنَا عَجْزَ الْمَعْرِفَةِ عَمّا تَخَيّرْتَ فَنَغْمِطَ قَدْرَكَ، وَ نَكْرَهَ مَوْضِعَ رِضَاكَ، وَ نَجْنَحَ إِلَى الّتِي هِيَ أَبْعَدُ مِنْ حُسْنِ الْعَاقِبَةِ، وَ أَقْرَبُ إِلَى ضِدّ الْعَافِيَةِ

(4) حَبّبْ إِلَيْنَا مَا نَكْرَهُ مِنْ قَضَائِكَ، وَ سَهّلْ عَلَيْنَا مَا نَسْتَصْعِبُ مِنْ حُكْمِكَ‏

(5) وَ أَلْهِمْنَا الِانْقِيَادَ لِمَا أَوْرَدْتَ عَلَيْنَا مِنْ مَشِيّتِكَ حَتّى لَا نُحِبّ تَأْخِيرَ مَا عَجّلْتَ، وَ لَا تَعْجِيلَ مَا أَخّرْتَ، وَ لَا نَكْرَهَ مَا أَحْبَبْتَ، وَ لَا نَتَخَيّرَ مَا كَرِهْتَ.

(6) وَ اخْتِمْ لَنَا بِالّتِي هِيَ أَحْمَدُ عَاقِبَةً، وَ أَكْرَمُ مَصِيراً، إِنّكَ تُفِيدُ الْكَرِيمَةَ، وَ تُعْطِي الْجَسِيمَةَ، وَ تَفْعَلُ مَا تُرِيدُ، وَ أَنْتَ عَلَى كُلّ شَيْ‏ءٍ قَدِيرٌ.

**************

دعای 33 : طلب خیر کے سلسله سے آپ کی دعا

(1) خدایا میں تیرے علم سے خیر کا طلبگار ہوں لہذا محمد آل محمد پر رحمت نازل فرما اور میرے حق میں خیر کا فیصلہ فرمادے۔

(2) مجهے راه خیر اختیار کرنے کا الہام عطا فرما اور اسے ذریعه قرار دیدے که میں تیرے فیصله سے راضی ہوجاؤں اور تیرے حکم کے سامنے سر تسلیم خم کردوں۔

(3) خدایا مجھ سے شک اور شبہ کو زائل کردے اور مخلصین جیسے یقین سے میری تائید فرمادے جو کچھ تونے میرے لئے پسند فرمایا ہے اس کی معرفت سے عاجزی کا دهبه میرے کردار پر نہ لگنے پائے که میں تیری قدر و منزلت کو سبک سمجھوں اور تیری رضا کی منزل سے ناراض ہوجاؤ ں اور اس شے کی طرف مائل ہوجاؤں جو حسن عاقبت سے بہت درو ہو اور ضد عافیت سے بہت قریب ہو۔

(4) ہم تیرے جس فیصلہ کو برا سمجہتے ہیں اسے محبوب بنادے اور جس حکم کو دشوار تصور کرتے ہیں اسے آسان بنادے۔

(5) ہمیں اس مشیت کی اطاعت کا الہام عطا فرما جو تونے ہم پر وارد کی ہے تا کہ جو چیز جلدی سامنے آجائے ہم اس کی تاخیر کے خواہان نہ ہوں اور جو چیز دیر میں آئے اس کی عجلت کے طلبگار نہ ہوں - تیری اشیاء کو مکروه نہ سمجھیں اور تیری ناپسندیده چیزوں کو اختیار نہ کرلیں۔

(6) ہمارا انجام ایسا قرار دینا جس کی عاقبت قابل ستائش ہو، اور جس کا نتیجہ بہترین ہو کہ تو عظیم نعمتوں کا افاده فرماتاہے اور بزرگترین عطیے عطا فرمادیتا ہے جو چاہتا ہے کرسکتا ہے اور ہر شے پر قدرت رکهتا ہے۔

**************


http://zoha.hoda.miu.ac.ir/uploads/sahife3_77975.jpg